Search
Close this search box.

احمدی مسلمانوں کی پاکستان میں حالت زار پر انسانی حقوق کی تنظیم کی رپورٹ

فہرست مضامین

احمدی مسلمانوں کی پاکستان میں حالت زار پر انسانی حقوق کی تنظیم کی رپورٹ

احمدی مسلمانوں کی پاکستان میں حالت زار پر انسانی حقوق کی تنظیم کی رپورٹ

تعارف 1
2. پس منظر 2
3. این سی ایچ آر کا ربوہ کا دورہ 3
4. شماریاتی جائزہ 6
5. نتیجہ 8
6. سفارشات 9
7. ضمیمہ اے 11
8. ضمیمہ بی 12
9. ضمیمہ سی 13
10. ضمیمہ D 16

 1.                               تعارف

نیشنل کمیشن فار ہیومن رائٹس (این سی ایچ آر) ایک آزاد قانونی ادارہ ہے جو نیشنل کمیشن فار ہیومن رائٹس ایکٹ، 2012 کے ذریعہ قائم کیا گیا ہے۔ یہ کمیشن اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین اور مختلف بین الاقوامی معاہدوں میں فراہم کردہ انسانی حقوق کے فروغ اور تحفظ کے لئے کام کرنے کا پابند ہے جس میں پاکستان ایک ریاستی فریق ہے۔ مختلف قانونی فرائض کے علاوہ کمیشن کو انسانی حقوق کی آئینی ضمانتوں کے تحت شہریوں اور پاکستان کے اندر ہر دوسرے فرد کو فراہم کردہ حفاظتی اقدامات کا جائزہ لینا ہے۔ اس طرح کے کسی بھی جائزے کی بنیاد پر کمیشن حکومت پاکستان کو حفاظتی اقدامات کے موثر نفاذ کے لئے موثر قانون سازی یا انتظامی اقدامات کی سفارش کرے گا۔

اپنی قانونی ذمہ داریوں کو نبھاتے ہوئے کمیشن میڈیا رپورٹس اور احمدیہ کمیونٹی کی جانب سے موصول ہونے والی انفرادی شکایات پر نظر رکھے ہوئے ہے۔ احمدیہ تنظیموں کی جانب سے کمیشن سے تحریری شکایات کے ساتھ بھی رابطہ کیا گیا ہے جس میں انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں اور عبادت گاہوں پر حملوں کے بارے میں اعداد و شمار کی معلومات شامل ہیں۔ اس طرح کے واقعات کی وجہ سے انسانی حقوق کے بہت سے مبصرین احمدیہ برادری کو پاکستان میں سب سے زیادہ ستائے جانے والے مذہبی گروہوں میں سے ایک سمجھتے ہیں۔ شکایات کی نوعیت اور شدت کے پیش نظر کمیشن کو اس مذہبی اقلیت پر تشدد کے واقعات پر صورتحال کی رپورٹ تیار کرنے کی ضرورت تھی۔

2.                               پس منظر

26 اپریل 1984 ء کو حکومت نے پاکستان پینل کوڈ میں ترمیم کرتے ہوئے احمدیوں کی بعض مذہبی سرگرمیوں کو جرم قرار دیا۔ اس قانونی فریم ورک نے احمدیوں کے لئے خود کو مسلمان ظاہر کرنا ایک مجرمانہ جرم بنا دیا، جس کی سزا توہین مذہب کے قوانین کے تحت دی جا سکتی ہے۔

اس کے بعد سے احمدیوں کو ہراسانی اور ظلم و ستم کا سامنا کرنا پڑا ہے حالانکہ حکومت نے تمام مذہبی اقلیتوں کو آئینی ضمانتوں کے حصول کے لئے حفاظتی اقدامات فراہم کرنے کی پالیسی اختیار کی ہے۔ اس طرح، ایسی متعدد رپورٹیں دستیاب ہیں جو ایک معاندانہ ماحول کو ظاہر کرتی ہیں جو ہجومی تشدد، محتاط رہنے اور کمیونٹی کے خلاف توہین مذہب کے متعدد الزامات میں کردار ادا کرتی ہے۔ حالیہ مہینوں میں ایسی اطلاعات اور شکایات موصول ہوئی ہیں کہ احمدیوں کی عبادت گاہیں بار بار تباہی کا نشانہ بن رہی ہیں۔ کمیونٹی کے ممبروں نے یہ بھی شکایت کی ہے کہ انہیں باقاعدگی سے مقامی قبرستانوں میں اپنے مرنے والوں کی تدفین سے روکا جاتا ہے ، جس کی وجہ سے انہیں تدفین کے لئے طویل فاصلہ طے کرنا پڑتا ہے۔ اطلاعات کے مطابق بعض اوقات پولیس کے حکم پر مسلمانوں کے قبرستان میں نامناسب تدفین کے بہانے لاشوں کو نکالا جاتا ہے۔ 6 دسمبر 2012 کو لاہور کے علاقے ماڈل ٹاؤن میں 15 مسلح افراد نے احمدیہ برادری کی 120 سے زائد قبروں پر دھاوا بول دیا تھا۔ احمدیوں کو ‘واجب القطل’ قرار دینے کے کھلے عام اعلانات کے بعد بہت سے لوگوں کو قتل کر دیا گیا ہے اور کمیونٹی کو بدنام کرنے سے خوف کا ماحول پیدا ہو گیا ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ بہت سے احمدی مذہبی ظلم و ستم کی بنیاد پر پناہ مانگتے ہیں۔

3.                               این سی ایچ آر کا ربوہ کا دورہ

احمدیہ کمیونٹی کو درپیش امتیازی سلوک اور ظلم و ستم کی جڑوں کی نشاندہی کرنے والی رپورٹس اور بڑی تعداد میں شکایات موصول ہونے کے جواب میں این سی ایچ آر نے 17 سے 18 ستمبر 2023 تک ربوہ (چناب نگر)، پنجاب میں ایک فیکٹ فائنڈنگ مشن شروع کیا۔ اس مشن کا بنیادی مقصد جماعت احمدیہ کے خلاف انسانی حقوق کی متعدد خلاف ورزیوں کی تحقیقات کرنا تھا، جس میں ان کی عبادت گاہوں اور تدفین کو درپیش خطرات پر خصوصی توجہ مرکوز کی گئی تھی۔ اس دورے کا مقصد کمیونٹی کو درپیش چیلنجوں کو جامع طور پر سمجھنے اور ان کی نگرانی کرنے کے لئے ایک پالیسی بریف تیار کرنا تھا۔ این سی ایچ آر کا مقصد پاکستان کے تمام شہریوں کے حقوق اور حفاظت کے تحفظ کی فوری ضرورت پر روشنی ڈالنا ہے۔

17 ستمبر 2023ء کو این سی ایچ آر کی ٹیم نے ربوہ میں صدر احمدیہ انجمن پاکستان کے دفتر میں کمیونٹی کے عمائدین کے ساتھ ملاقات کی۔ اس اجلاس میں کمیونٹی کے نمائندوں نے انہیں درپیش مسائل پر روشنی ڈالی۔ ان میں ایک علیحدہ انتخابی فہرست کو برقرار رکھنا، ملک بھر کے مختلف تعلیمی اداروں میں طلباء کو درپیش امتیازی سلوک، پولیس کی جانب سے غیر تعاون کا مظاہرہ، ملازمت اور کام کی جگہ پر امتیازی سلوک، اور قبرستانوں اور عبادت گاہوں کی بے حرمتی شامل ہیں۔

دورے کے دوران این سی ایچ آر نے احمدیہ برادری کو ملنے والی مختلف دھمکیوں کے بارے میں بھی سنا۔ خاص تشویش کی بات ڈسکہ کی صورت حال تھی، جہاں احمدیہ برادری سے تعلق رکھنے والی ایک تاریخی عبادت گاہ کے میناروں کو منہدم کرنے کی کھلی دھمکیاں دی گئی تھیں۔ پرانے شہر ڈسکہ میں واقع اس تاریخی مقام کو برصغیر پاک و ہند کی تقسیم سے قبل تحریک پاکستان کی ممتاز شخصیت اور ملک کے پہلے وزیر خارجہ سر ظفر اللہ خان نے تعمیر کیا تھا۔

واضح رہے کہ لاہور ہائی کورٹ نے حال ہی میں ایک حکم نامہ جاری کیا ہے جس میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ 1984 کے قانون سے قبل احمدیوں کی عبادت گاہوں پر بنائے گئے میناروں کو منہدم یا تبدیل نہیں کیا جاسکتا۔ اس واضح اور قانونی طور پر پابند عدالتی حکم کی موجودگی کے باوجود، احمدی برادری کی متعدد پرانی عبادت گاہوں کو حالیہ دنوں میں حملوں اور توڑ پھوڑ کے واقعات کا نشانہ بنایا گیا ہے۔

بحث کے دوران کمیونٹی کے نمائندوں نے کہا کہ احمدیوں کے خلاف ظلم و ستم کی بنیادی وجوہات پاکستان کے آئین میں 1974 کی دوسری ترمیم ہے جس میں احمدیوں کو غیر مسلم قرار دیا گیا ہے۔ مزید برآں، انہوں نے احمدیوں کے خلاف، خاص طور پر سوشل میڈیا پر، نوجوانوں کے خلاف مذہبی اشتعال انگیزی اور ان کے خلاف پھیلائی جانے والی نفرت انگیز تقاریر پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے احمدی نوجوانوں کو روزمرہ کی زندگی میں شدید جذباتی اور نفسیاتی صدمے اور خوف سے آگاہ کیا۔

حالیہ واقعات میں احمدیوں کی ایک بڑی تعداد کو “عید الاضحی” منانے کی وجہ سے ملک بھر میں ظلم و ستم کا سامنا کرنا پڑا۔ نمائندوں نے احمدی خواتین کو خاص طور پر پسماندگی، نشانہ بنانے اور امتیازی سلوک پر بھی روشنی ڈالی۔ یہ امتیازی سلوک ان کی زندگی کے تمام پہلوؤں پر محیط ہے، جس میں تعلیم اور ملازمت کے مواقع تک محدود رسائی، ان کے مذہبی رسوم و رواج پر عمل کرنے میں پابندیاں، روزانہ ہراسانی، تشدد، اور فیصلہ سازی کی جگہوں میں نمائندگی کا فقدان شامل ہے۔

مزید برآں، نمائندوں نے کہا کہ احمدیوں پر حملے انہیں شہروں اور یہاں تک کہ ملک سے ہجرت کرنے پر مجبور کرتے ہیں۔ ظلم و ستم کا شکار ہونے والے اکثر اپنے گھروں اور کاروباروں کو چھوڑ کر محفوظ مقامات پر پناہ لیتے ہیں۔ چیلنجنگ حالات مناسب مارکیٹ قیمت پر جائیدادوں کی فروخت میں مشکلات کو مزید بڑھاتے ہیں۔ تعلیمی اداروں اور کام کی جگہوں کے اندر امتیازی سلوک بہت سے احمدی طلباء اور پیشہ ور افراد کو اپنی تعلیم اور ملازمتوں کو چھوڑنے پر مجبور کرتا ہے ، جس سے نقل مکانی اور محرومی کا ایک سلسلہ جاری رہتا ہے۔

این سی ایچ آر کی ٹیم نے ان افراد کے ساتھ ایک میٹنگ کی جو ظلم و ستم کا شکار ہوئے ہیں ، یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ ان میں سے ایک بڑی تعداد نے نفسیاتی صدمے کی علامات ظاہر کیں اور ان کے خلاف حملوں اور امتیازی سلوک کے براہ راست یا بالواسطہ واقعات سے پیدا ہونے والے ذہنی صحت کے مسائل سے نبردآزما تھے۔

این سی ایچ آر کی ٹیم نے جن لوگوں سے ملاقات کی ان میں ننکانہ صاحب کے رہائشی طارق بھی شامل تھے جو حفاظتی وجوہات کی بنا ء پر ربوہ منتقل ہوگئے تھے۔ ملاقات کے دوران طارق نے ایک افسوسناک واقعہ شیئر کیا جہاں وہ اور ان کے بیٹے جو حال ہی میں بیرون ملک ایم بی بی ایس مکمل کرنے کے بعد پاکستان واپس آئے تھے، پر اس وقت حملہ کیا گیا جب وہ نماز ادا کرنے جارہے تھے۔ افسوس ناک بات یہ ہے کہ ایک نوجوان نے ان پر فائرنگ کر دی جس کے نتیجے میں طارق کا نوجوان بیٹا طاہر فوری طور پر ہلاک ہو گیا اور طارق شدید زخمی ہو گیا۔ عدالت نے جرم کی سنگینی کو تسلیم کرتے ہوئے حملہ آور کو عمر قید کی سزا سنائی تھی۔

طارق نے این سی ایچ آر کی ٹیم کو دی گئی اپنی درخواست میں حکومت سے انتظامی اقدامات کے نفاذ کے لیے مداخلت کی درخواست کی تھی جس کا مقصد ان جیسے افراد اور ان کے بیٹے کو مستقبل کے حملہ آوروں سے بچانا ہے۔ ان کی دلی درخواست میں احتیاطی تدابیر کی فوری ضرورت پر زور دیا گیا تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ نفرت اور تشدد کی وجہ سے کوئی بھی ہلاک نہ ہو۔

اسی طرح محترمہ مائرہ نے ربوہ میں ایک انتہا پسند تنظیم کے پیروکار کے ہاتھوں اپنے والد کے قتل کی کہانی بھی شیئر کی۔ ملزم نے 8 اگست 2022 کو چاقو کے وار کر کے اسے قتل کر دیا تھا اور مقدمہ چل رہا ہے۔ محترمہ مائرہ کیس میں تاخیر سے مایوس تھیں اور انہوں نے امید ظاہر کی کہ کیس کی بروقت سماعت کی جائے گی تاکہ اہل خانہ کو انصاف مل سکے۔

4.                               شماریاتی جائزہ


کمیشن نے احمدی کمیونٹی کی جانب سے این سی ایچ آر کو فراہم کردہ اعداد و شمار کا جائزہ لیا ہے جس میں کمیونٹی کے خلاف انسانی حقوق کی وسیع پیمانے پر خلاف ورزیوں کی تفصیلات دی گئی ہیں۔ ان رپورٹوں کے مطابق احمدیوں پر حیرت انگیز طور پر قانونی الزامات عائد کیے جاتے ہیں جن میں کلمہ کی نمائش پر 765 مقدمات، اذان دینے پر 47 مقدمات، تبلیغ کے لیے 861 مقدمات اور دیگر مقدمات شامل ہیں۔ یہاں تک کہ 1989 میں احمدیہ کی صد سالہ تقریبات یا 1894 میں گرہن کی 100 ویں سالگرہ جیسی تقریبات کو بھی قانونی نتائج کا سامنا کرنا پڑتا ہے، جو ان کی مذہبی آزادیوں پر پابندیوں کی حد کی عکاسی کرتے ہیں۔

پی پی سی 295 سی کے تحت توہین مذہب کے الزامات پر فوجداری مقدمات بھی درج ہیں، جن میں 334 احمدیوں کو ایسے مجرمانہ الزامات کا سامنا ہے۔ ایک مثال میں لندن میں مقیم جماعت احمدیہ کے سابق سپریم سربراہ پر سولہ مقدمات میں غیر موجودگی میں فرد جرم عائد کی گئی جبکہ موجودہ سپریم ہیڈ کو دو مقدمات میں الزامات کا سامنا ہے۔ احمدیہ کمیونٹی کے صدر مقام ربوہ اور کوٹلی میں احمدیوں سمیت پوری آبادی کو اجتماعی قانونی کارروائیوں کا سامنا کرنا پڑا ہے، جو قانونی نظام میں موجود نظامی امتیازی سلوک کی عکاسی کرتا ہے۔

1984 سے ستمبر 2023 تک کمیونٹی کی طرف سے فراہم کردہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ 280 احمدیوں کو ٹارگٹ کلنگ کی وجہ سے اپنی جانوں سے ہاتھ دھونا پڑا ہے، اور اضافی 415 کو اپنے عقیدے کی وجہ سے حملوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ احمدیوں کی مذہبی شناخت پر حملہ احمدیوں کی 51 عبادت گاہوں کو مسمار کرنے اور حکام کی جانب سے 46 دیگر کو سیل کرنے سے ظاہر ہوتا ہے۔ مزید برآں، 39 عبادت گاہوں کو آگ لگا دی گئی ہے یا انہیں نقصان پہنچایا گیا ہے، اور 18 پر زبردستی قبضہ کیا گیا ہے، جس سے برادری کے لئے لازمی عبادت گاہوں کو ختم کرنے کی ایک منظم کوشش کا انکشاف ہوتا ہے۔

حکام نے احمدیوں کی 62 عبادت گاہوں کی تعمیر میں بھی رکاوٹ ڈالی ہے جس سے ادارہ جاتی امتیاز کو تقویت ملی ہے۔ یہ خلاف ورزی میت کے تقدس تک پھیلی ہوئی ہے، 39 احمدیوں کی لاشوں کو تدفین کے بعد نکالا جاتا ہے، اور 96 افراد کو مشترکہ قبرستان میں دفن کرنے سے انکار کیا جاتا ہے۔ پریشان کن بات یہ ہے کہ صرف رواں سال کے دوران 99 احمدی قبروں کی بے حرمتی کی گئی اور انہیں نقصان پہنچایا گیا، جس سے ان کے وقار پر حملے کی نوعیت پر زور دیا گیا، یہاں تک کہ مختلف رپورٹس کے مطابق موت کے منہ میں بھی۔

احمدیوں کے گھروں اور دکانوں سے کلمہ ہٹانے کے 64 واقعات اور ان کی عبادت گاہوں سے ہٹائے جانے کے 115 واقعات ان کی روزمرہ زندگی میں گہرے امتیازی سلوک اور عدم رواداری کی مزید نشاندہی کرتے ہیں۔ یہ اعداد و شمار پاکستان میں احمدیہ کمیونٹی کو درپیش منظم اور سنگین خلاف ورزیوں کو دور کرنے اور ان کی اصلاح کے لئے مربوط کوششوں کی فوری ضرورت پر روشنی ڈالتے ہیں۔1

یہ بات قابل ذکر ہے کہ توہین رسالت کے قانون کے تحت جیلوں میں احمدیوں کی محدود تعداد قید ہے جو مناسب قانونی عمل کے فقدان کی نشاندہی کرتی ہے۔ اس سے پتہ چلتا ہے کہ وہ بنیادی طور پر قانون کے مناسب عمل کے بجائے جنونی ہجوم کے ذریعہ کی جانے والی نگرانی کی کارروائیوں کا شکار ہوئے ہیں۔


Discover more from احمدیت حقیقی اسلام

Subscribe to get the latest posts to your email.

Leave a Reply